My Trade Union

جان لیوا مہنگائی سے عوام کو چھٹکارا ، پیٹرول گیس بجلی کی قیمتوں  میں اضافہ واپس لیا جاٸے۔ محمد اقبال
URDU

جان لیوا مہنگائی سے عوام کو چھٹکارا ، پیٹرول گیس بجلی کی قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جاٸے۔ محمد اقبال

Sep 4, 2023

آئی ایم ایف کے قرضوں کا بوجھ غریب محنت کش عوام پر ڈالا گیا ہے جس سے غریبوں کے چیخیں نکل رہی ہیں ان قرضوں کو اشرافیہ ہڑپ کر گئے ہیں۔ احتجاجی جلسے سےخطاب

نوشہرہ (ٹریڈ یونین ) متحدہ لیبر فیڈریشن کے رہنماوں نے مطالبہ کیا ہے کہ مہنگائی کی اژدھا غریب عوام کو ہڑپ کررہی ہے اس جان لیوا مہنگائی سے عوام کو چھٹکارا دلایا جائے پیٹرول گیس بجلی کی قیمتوں میں ناروا اضافہ واپس کیا جائے اور روزمرہ زندگی کے اشیاء کی قیمتوں میں خاطر خواہ کمی کے لئے ہنگامی اقدامات اٹھائیں جائیں۔۔۔۔۔ مہنگاٸی اور محنت کشوں کے ساتھ ناروا سلوک پر احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوٸے فیڈریشن کے صوباٸی صدر محمد اقبال نے کہا کہ آئی ایم ایف کے قرضوں کا بوجھ غریب محنت کش عوام پر ڈالا گیا ہے جس کے تلے دبے غریبوں کے چیخیں نکل رہی ہیں ان قرضوں کو اشرافیہ ہڑپ کر گئے ہیں اور زیادہ تر سرمایہ ملک سے باہر منتقل کیا گیا ہے متحدہ لیبر فیڈریشن مطالبہ کرتا ہے کہ بیرونی ممالک وزیروں مشیروں قومی و صوبائی اسمبلیوں کے ممبران سمیت سرکاری ملازمین ججوں جرنلز کے منتقل شدہ اثاثوں کو پاکستان منتقل کرنے کے ہنگامی اقدامات اٹھائیں جائیں اور ان افراد کی ملکی سیاست میں عمل دخل/ الیکشن میں حصہ لینے پر پابندی عائد کی جائے جن کے اثاثے ملک سے باہر ہیں۔۔۔۔۔۔
اس ہوشربا گرانی کے مقابلے میں مقرر کردہ کم از اجرت مزدوروں کے ساتھ کسی مذاق سے کم نہیں مگر پھر بھی صوبائی حکومت نے کم از کم اجرت 32000 روپے کا نوٹیفکیشن سرد مہری کا نظر کیا ہے اس بلا وجہ تاخیر نے محنت کشوں کو فاقوں پر مجبور کیا ہے۔۔ متحدہ لیبر فیڈریشن اس تاخیر کوصوبائی حکومت کا مجرمانہ غفلت سمجھتا ہے اور مطالبہ کرتا ہے کہ فوری طور پر 32000 کم از اجرت کا نوٹیفکیشن جاری کیا جائے اور اس پر بھرپور عمل درآمد کے لئے ٹھوس اقدامات اٹھائیں۔۔۔۔۔۔۔
ورکرز ویلفیئر فنڈ اور اس کے زیر انتظام صوبوں میں مقیم بورڈز مزدوروں کے فلاح بہبود کیلئے قائم ادارے ہیں مگر ان اداروں سے محنت کشوں کو ملنے والے مراعات وسہولیات کا حصول عذاب بنتے جارہے ہیں اکثر یونیورسٹیوں میں مزدوروں نے قرضے لے کر بچوں کو داخلے دلوائے ہیں جس کی reimbursement تین چار سالوں سے نہیں ہو پا رہی۔ سکولز میں پڑھنے والے بچوں کی یونیفارم اور کتابوں سمیت ٹرانسپورٹ کے مد ادائیگیوں کو بھی ایک مذاق بنایا گیا ہے ظلم در ظلم یہ کہ اس کمرتوڑ مہنگائی نے جہاں قلیل اجرتوں میں کام کرنے والے مزدوروں کا جینا محال بنایا ہے وہاں صوبائی بورڈ نے لیبر کالونیوں کے کرایوں میں 2020 میں اور اب 2023 میں دوبارہ کرایوں اور فیسوں میں سو فیصد اضافہ کرکے ان کے زخموں پر نمک چھڑکایا ہے۔ متحدہ لیبر فیڈریشن مطالبہ کرتا ہے کہ یہ ظالمانہ اضافہ واپس لیا جائے اور دیگر ادائیگیوں کو فوری طور پر یقینی بنائیں دیگر صورت بورڈ کے سامنے دھرنا اور گھیراو کے سوا کوئی چارہ نہ ہوگا۔۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *